سوال

خُداوندا ! تری مرضی
تُو جب چاہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جسے چاہے
اُسے صحرا کی جلتی ریت پر لا کر کھڑا کر دے
لب ِ دریا کسی کی پیاس کا تُو امتحاں لے لے
کہیں پتھّر کا سینہ چیر کر چشمے نکالے تو کسی کی پیاس کی خاطر زمیں دریا بہا ڈالے
کئی میلوں مسافت پر یہ پھیلی بستیاں اپنی
زمانے لگ گئے جن کو بسانے میں۔۔۔۔۔۔۔ سجانے میں
وہ اِک پل میں مٹا ڈالے
خداوندا! تری مرضی
تو قرنوں بعد بھی ملبے تلے سوئی ہوئی بے جان سانسوں کو رواں کر دے
انہیں زندہ نشاں کر دے
بپھر جائیں اگر موجیں
سمُندر بُرد ہو جائیں سفینوں پر سفینے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پانیوں میں جب اُچھال آئے
جسے چاہے بچانا تُو
اُسے ساحل پہ صدیوں بعد اِک مچھلی اُگل جائے
کبھی چھوٹی سی چنگاری کو شعلوں میں بدل کر تُو جلا ڈالے سبھی آنگن
جو تو چاہے تو شعلوں کو گُل و گل زار بھی کر دے
کسی کا چاک ہو سینہ ، کلیجا چیر کر دانتوں سے وَحشت رقص میں آئے
خُدا وندا تری مرضی
جسے تونے بچانا ہو اُسے صحرا سے نخلِستان کے سائے میں لے آئے
خداوندا ! دُہائی ہے
بدن اب بھی اُدھڑتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ سسکتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ بلکتے ہیں
سُلگتی بے کفن لاشیں فَضا میں بَین کرتی ہیں
کلیجا منہہ کو آتا ہے
یہ خُون آلود منظر آنکھ سے دیکھے نہیں جاتے
مِرے مالک ‘ مِرے داتا!! نہیں شکوہ مجھے تجھ سے
مگر اِتنا تو بتلا دے
تنے میں اب درختوں کے پناہیں کیوں نہیں ملتیں ؟
سہارا دینے والی نرم بانہیں کیوں نہیں ملتیں ؟

( نازؔ بٹ )

حصہ