تشنہ سمندر کے خالق اور عہدِ حاضر کے معروف شاعر ڈاکٹر محمد آصف کا کلام …………………

غزل
نہ پوچھ کیسی قیــــــــامت کا سامنا ہوگا
وہ مجھ کو چھوڑ کے جس وقت جا رہا ہوگا
وہ مل بھی جـاۓ کسی راہ پـــر تو کیا ہوگا
ہمــــــــارے بیچ زمــــــانوں کا فاصلــہ ہوگا
تمہـــــارے گرد تو حلقـــــہ بگوش ہے دنیـا
ہم اک بھٹکتی صـدا ہیں ہمارا کیا آئینہ ہوگا
ہوائیں اس کے دیچوں پہ دستکین دیں گی
مگــــــــر وہ اور کوئ خــــواب دیکھتــا ہوگا
جو خاروخس کی طرح تیرے راستوں میں رہا
اس ایک شخص کو تو بھی تو جــــانتا ہوگا
کہیں چـــــــــــراغ کی لو ٹمٹما رہی ہوگی
کسی کے گــــــرد ستاروں کا جمگھٹا ہوگا
ڈاکٹر آصف مغل

حصہ