(یا علی۴ آپ یاد آتے ھیں!)
…………………………..
جب کسی ناموَر قبیلے کا
کوئی سردار دیکھتا ھوں میں
جب بھی سنتا ھوں ٹاپ گھوڑے کی
اور تلوار دیکھتا ھوں میں
یا علی۴ آپ یاد آتے ھیں!
…………………………..
رَافعہ پوچھتی ھے جب مجھ سے
کون واقف ھے آسمانوں سے
جاثیہ بھی سوال کرتی ھے
آشنا کون ھے جہانوں سے
یا علی۴ آپ یاد آتے ھیں!
…………………………..
ذھن میں جب کوئی سوال آئے
جس کا حاصل مجھے جواب نہ ھو
ڈھونڈتا ھوں میں پھر کتابوں میں
اور کوئی مُستند کتاب نہ ھو
یا علی۴ آپ یاد آتے ھیں!
…………………………..
جب بھی قرآن کھولتا ھوں میں
ھونے لگتی ھے چشم تر میری
پہلی سُورَہ کی پہلی آیت پر
ٹھہر جاتی ھے پھر نظر میری
یا علی۴ آپ یاد آتے ھیں!
…………………………..
جیب میں پیسے ختم ھو جائیں
اور پیسوں کا انتظام نہ ھو
دل سے نادِ علی۴ جو پڑھتا ھے
کیسے ممکن ھے اسُکا کام نہ ھو
یا علی۴ آپ یاد آتے ھیں!
…………………………..
جب بھی شعر و سخن کی محفل ھو
اور سب کـُہنہ مَشق شاعر ھوں
سوچتا ھوں کہ ایسی محفل میں
داد کیسے وصول کرنی ھے
یا علی۴ آپ یاد آتے ھیں!
…………………………..
درسگاھوں میں لوگ سوچتے ھیں
درسگاھوں میں لوگ پوچھتے ھیں
عِلم دریا ھے ایسے دریا کو
کون کـُوزے میں بَند کرتا ھے
یا علی۴ آپ یاد آتے ھیں!
…………………………..
حَشر کے روز جب نبی ءِ کریم (صَلَّی ﷲُ عَلَیہِ وَسَلَّم )
اپنی امَّت کے دُوبَدُو ھونگے
ھم خطا کار بـے عمَل انسان
کسطرح انکے رُوبرُو ھونگے
یا علی۴ آپ یاد آتے ھیں!
……………………………
(مُحمَّد مَحمُود احمد ھاشمی)

حصہ