سینٹرل جیل میانوالی میں غیر معیاری ادویات کا استعمال ۔ نان آفیشل وزیٹر اور ڈاکٹر نے بھانڈا پھوڑ دیا
سینٹرل جیل میانوالی کے نان آفیشل وزیٹر حقنواز خان روکھڑی اور جیل کے میڈیکل آفیسر ڈاکٹر اکرام اللہ خان نے انکشاف کیا ہے کہ سینٹرل جیل میانوالی میں غیر معیاری ادویات استعمال کی جاتی ہیں ۔ حقنواز خان روکھڑی نے گورنر پنجاب رفیق رجوانہ ، وزیر اعلیٰ پنجاب ، سیکرٹری داخلہ پنجاب ، آئی جی جیل خانہ جات ، پنجاب کی وزیر بہبودِ آبادی ذکیہ شاہنواز اور سیشن جج میانوالی کے نام اپنی ایک درخواست میں موقف اختیار کیا ہے کہ ’’ کچھ عرصہ سے جیل کے اندر اور باہر کرپشن کی انتہاء ہو گئی ہے ۔ اس سے قبل بھی تحریری طور پر آگاہ کر چُکا ہوں ۔ مگر میری درخواست پر کارروائی کی بجائے اُن کی ترقی ہو گئی ہے ۔ جیل میں منشیات۔ موبائل فون کے استعمال کا دھندا عروج پر ہے ۔ انہوں نے الزام لگایا کہ جیل افسران نے جیل کو شراب خانہ بنایا ہوا ہے ہر روز شراب کی محفل سجتی ہے اس ساری کارروائی کا سرغنہ ایک ڈپٹی بتایا جاتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ایک ہزار روپئے کا موبائل فون جیل میں 15 سے 20 ہزار روپئے میں فروخت کیا جاتا ہے ۔ اور کچھ عرصہ بعد پکڑ کر 20 سے50 ہزار میں سودا کیا جاتا ہے ۔ عدم ادائیگی پر 3 ماہ کے لیئے قصوری میں بند کر دیا جاتا ہے ۔ انہوں نے جیل کے اندر منشیات فروشی کا الزام بھی عائد کیا ۔ حقنواز خان روکھڑی کا کہنا ہے کہ جیل میں یہ تما اشیاء اہلکاروں اور افسران کے ذریعے لائی جاتی ہیں ۔ سب چیزیں قیدیوں میں پرندے تو پھینک کر نہیں جاتے ۔ انہوں نے کہا کہ ان تمام معاملات کی نشاندہی میں چھ ماہ پہلے کر چُکا ہوں ۔ میں چھ ماہ سے سپریٹنڈنٹ جیل مرزا ساجد بیگ سے کہ رہاہوں مگر ساجد بیگ اپنا حصہ وصول کر تا رہا مجھے سب ٹھیک ہے کہ کر ٹرخاتا رہا ۔ جیل کے لنگر کی صورتحال انتہائی ابتر ہے ۔ جیل ہسپتال کی حالت جانوروں کے باڑے جیسی ہے ۔ سرگودھا کے البدر ٹریڈرز سے ادویات منگوائی جاتی ہیں جو جیل جو جیل آفیسر کے بھائی کی ذاتی ہے اور اُس کا بھتیجا چلا رہا ہے ۔ڈاکٹر اکرام کو ڈرا ڈھمکا کر ناقص جعلی ادویات سے کئی قیدی سخت بیمار ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جیل میں تعینات میڈیکل آفیسر ڈاکٹر اکرام اللہ خان وتہ خیل نے بھی وزیر اعلیٰ پنجاب اور دیگر کے نام ایک تحریری درخواست میں جیل کے NOV حقنواز خان روکھڑی کے موقف کی تائید کرتے ہوئے سپریٹنڈنٹ سنٹرل جیل میانوالی مرزا ساجد بیگ پر غیر معیاری ادویات کی خرید کا الزام عائد کیا ۔ ڈاکٹر اکرام اللہ خان نے تحفظ فراہم کرنے کی یقین دہانی پر مزید انکشافات کا اعلان کیا۔ سینٹرل جیل میانوالی کے بارے میں سنگین نوعیت کی شکایات منظر عام پر آنے کے حکومتی ایکشن کا تاحال انتظار کیا جا رہا ہے ۔۔۔

حصہ