٭ شہنشائے لوک موسیقی عطاء اللہ خان عیسییٰ خیلوی سے انٹر ویو۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ملاقات :۔ انوار حسین حقی
لوک گائیکی میں عطاء اللہ خان عیسیٰ خیلوی کسی تعارف کے محتاج نہیں ان کے سرائیکی گیتوں کی نغمگی نے جہاں بھر کو مترنم کیا۔ آج سے تین دہائی قبل پنجاب اور خیبر پختونخواہ کے سنگھم پر واقع ضلع میانوالی کے پسماندہ و درماندہ شہر عیسیٰ خیل سے یہ پر سوز آواز بلُند ہوئی اور پھر دنیا بھر میں مقبول ہو تی چلی گئی۔ عطاء اللہ عیسی خیلوی نے سرائیکی، اردو اور پشتو موسیقی میں اپنا فن منوایا۔ پرائڈ آف پر فارمنس اور لائف ٹائم ایچیومنٹ ایوارڈ سیمت سینکڑوں اعزازات ان کے نام ہوئے۔۔عطاء اللہ خان عیسیٰ خیلوی گذشتہ کئی سالوں سے پاکستان تحریک انصاف میں عمران خان کے شانہ بشانہ ہیں۔2013 ء کے عام انتخابات کے موقع پر پی ٹی آئی کے لیئے ان کے گائے ہوئے ترانے ”جن آئے گا عمران۔ بنے کا نیا پاکستان“ نے مقبولیت کے ریکارڈ قائم کیئے ہیں۔ عطاء اللہ خان عیسیٰ خیلوی عملی سیاست میں بھر پور انداز میں سرگرمِ عمل ہیں۔ پاکستان تحریک انصاف کے رائے ونڈ مارچ کے لیئے انہوں نے اپنی رہائش گاہ ”عیسیٰ خیلوی ہاؤس“ میں ایک بھر پور ورکرز کنونشن منعقد کیا۔ اس کنونشن کے موقع پر ان کی سیاسی زندگی کے حوالے سے ”نیلاب“ کے لیئے لیا گیا خصوصی انٹر ویو نذرِ قارئین کیا جا رہا ہے۔۔۔۔۔۔13051753_480880405451968_3107957385598331324_n
٭نیلاب:۔ موسیقی کی دنیا میں اتنا معتبر مقام حاصل کرنے کے باوجود سیاست کی بھیرویں گانے کی ضرورت کیوں محسوس ہوئی؟
٭عطاء اللہ عیسیٰ خیلوی:۔ سیاست میرا اوڑھنا بچھونا ہے میں شروع سے ہی سیاست میں حصہ لیتا چلا آرہا ہوں۔ ہمارا گھرانہ سیاسی ہے۔ گائیکی سے پہلے میں ایک سر گرم سیاسی کارکن رہا۔ ان دنوں میں پاکستان پیپلز پارٹی تحصیل عیسیٰ خیل کا صدر ہوا کرتا تھا۔ کچھ عرصہ بعد میں نے بھٹو مرحوم کی پالیسیوں سے اختلاف کرتے ہوئے سیاست سے کنار ہ کشی کر لی تھی اب عمران خان مجھے دوبارہ سیاست میں لے آئے ہیں۔13879398_161936370881721_8890947315691011958_n
٭جرائت:۔بھٹو مرحوم سے ایسا کیا اختلاف تھا کہ آپ نے سیاست چھوڑ دی اور عمران خان میں ایسی کیا خوبی ہے کہ آپ دوبارہ سیاست میں آ گئے؟
٭عطاء اللہ عیسیٰ خیلوی:۔ بلاشُبہ بھٹو مرحوم اس قوم کے بہت بڑے لیڈر اور سیاستدان تھے ہمارے علاقے میں انہوں نے ان لوگوں کو اپنی پارٹی میں نہ صرف شامل کیا بلکہ کرتا دھرتا بنا دیا تھا جن کے خلاف جدو جہد کرتے ہوئے ہم نے سیاست شروع کی تھی۔ جن بڑے جاگیرداروں اور وڈیروں کے خلاف عوام جدو جہد کر رہے تھے ان کی پارٹی میں غلامی نہ مجھے منظور تھی اور نہ میرے علاقے کے غیور عوام کو اس لیے میں نے اور میرے ساتھیوں نے پیپلز پارٹی سے علیحد گی اختیار کر لی تھی۔ جہاں تک عمران خان کا تعلق ہے وہ ایک سچا اور کھرا انسان ہے۔ اس قوم کے لیے اُس نے ورلڈ کپ جیتا۔ شوکت خانم میموریل ہسپتال کی صورت میں انسانی خدمت کا عظیم الشان ادارہ قائم کیا۔ شوکت خانم ہسپتال کے لیئے عطیات جمع کرنے کی مہم کے دوران میں نے عمران خان کے ہمراہ دنیا بھر کا سفر کیا ہے میں نے انہیں انتہائی دیانت دار اور خوبصور ت انسان پایا۔ سب سے بڑھ کر یہ کہ ہمار ا کپتان دیانتدار ہے۔ لوگ ان پر اعتماد کرتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ میں نے سیاست میں دوبارہ عملی حصہ لینا شروع کر دیا ہے۔
٭نیلاب:۔ سیاست میں آپ کے کیا مقاصد ہیں؟
٭عطاء اللہ عیسیٰ خیلوی:۔ سیاست میں مقاصد کا تعین ہمارے کپتان عمران خان نے کیا ہے۔ میرے نزدیک عمران خان اس حوالے سے رجائیت پسند واقع ہوا ہے کہ اُس کی نظر ہمیشہ رات کی بھیلی ہوئی تاریکی سے زیادہ اُن مدھم مدھم جلتے بُجھتے ستاروں پر رہتی ہے جن میں روشنی اپنے تمام تر امکانات کے ساتھ حوصلہ بڑھانے کے لیئے موجود ہو تی ہے۔ عمران خان کی سرشت میں مایوسی کا دور دور تک شائبہ نہیں۔ اُس کی قلندرانہ ادائیں ایک نئے پاکستان کی بنیاد کا سندیسہ ہیں۔ میں اور میرے ساتھی عمران خان کا دست و بازو ہیں۔ ہاں ضلع میانوالی کی حد تک میرے سیاسی مقاصد ہیں۔ جب میں یہ کہتا ہوں کہ ”تینوں لے کے جانا اے میانوالی“۔ تو لگتا ایسا ہے کہ میں کسی دوشیزہ سے مخاطب ہوں۔لیکن میرے دل و دماغ میں اُس وقت یہ سمایا ہوا ہوتا ہے کہ میں دنیا کی ہر خوبصورتی اپنے میانوالی لے جاؤں۔ میرا بچپن میری جوانی غرضیلہ تمام عمر میانوالی کی پسماندگی اور درمانگی کی گواہ ہے۔ میں اپنے علاقے کی خدمت کرنا چاہتا ہوں۔ یہاں صحت تعلیم کی سہولتوں کے ساتھ ساتھ سماج کی ترقی کی خواہش بھی رکھتا ہوں۔ یہی میری زندگی کا مدعا ہے۔ 13814058_1084410298310784_7824176111918250375_n
٭نیلاب:۔ دنیا بھر میں آپ کا حلقہ ہے آپ کہاں رہنا زیادہ پسند کرتے ہیں۔۔؟
٭عطاء اللہ عیسیٰ خیلوی:۔ دنیا میں پاکستان سے زیادہ خوبصورت اور پیارا کوئی دوسرا ملک نہیں ہے۔ پاکستان میں میانوالی مجھے دل وجاں سے عزیز ہے۔ میں اپنی زندگی کی آخری سانسیں اپنے میانوالی کو دینا چاہتا ہوں۔
٭نیلاب:۔ آپ ایک فنکار ہیں۔ ایک عالم آپ کی پرسوز و مترنم آواز کا اسیر ہے۔ آپ عمران خان کی احتجاجی سیاست کے ہمنواء ہو گئے۔ لاٹھی گولی کی سرکار کا کبھی خوف آپ کے اندر پیدا نہیں ہوا۔۔۔۔۔؟
٭عطاء اللہ عیسیٰ خیلوی:۔میں میانوالی کا پٹھان ہوں۔ میری ماں نے مجھے بندوق چلانی سکھائی تھی۔ میرے عشق نے میرے ہاتھ میں ہارمونیم تھما دیا ہے۔ میرا علاقہ خطہ غیرت اور قریہ حریت ہے ہم دوستی اور دشمنی میں واضح رہنا پسند کرتے ہیں۔ عمران خان کی سیاست میں اس قوم کے لیئے اُمید کی کرن ہے۔ خوشحالی کے سندیسے ہیں۔ نئے پاکستان کے خواب کی تعبیر سے پاکستان کے عوام نے اپنا مستقبل وابستہ کر لیا ہے لہذا ڈرنا کس بات کا۔
دل اُس کو دیا ہے تو وہی اُس میں رہے گا
ہم لوگ امانت میں خیانت نہیں کرتے
ہم نے عمران خان کو دل دیا ہے ہم اُسے جاں بھی دیں گے۔ اس دھرتی کے لیئے اس ملک کے لیئے جو بھی ہم سے ہو سکا ہم کریں گے۔ ہمارے پاس جان ہے ہمارے پاس فن ہے وہ حاضر پے خان کے لیئے پاکستان کے لیئے۔ 13413740_1646847045638155_4591378802440551315_n
٭نیلاب:۔کیا اپ انتخابات میں حصہ لینے کا ارادہ رکھتے ہیں؟
٭عطاء اللہ عیسیٰ خیلوی:۔ انتخابات میں میں کافی عرصہ سے حصہ لے رہا ہوں۔ عمران خان کو جو آبائی حلقہ انتخاب این اے 71 ہے اُسی میں میرا گھر ہے۔ میں 1997 ء، 2002 ء اور2013 ء کے انتخابات میں عمران خان کی انتخابی مہم کا حصہ رہا ہوں۔ حالیہ بلدیاتی انتخابات میں بھ میں نے پارٹی کے امیدوارون کی کامیابی کے بھر پور کوشش و جد و جہد کی ہے۔ میں اپنی سیاست اور انتخابات کے حوالے سے پہلے بھی اپنے قائد عمران خان کے فیصلوں کا پابند رہا ہوں اور آئندہ بھی عمران خان کے حکم کا پابند رہوں گا۔ 14542687_1777380152475971_698604788_n
٭نیلاب:۔پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے رائے ونٖڈ مارچ میں رکاوٹیں ڈالنے کی باتیں سامنے آ رہی ہیں۔ آپ کی پارٹی رائے ونٖڈ مارچ کو پر امن رکھنے کے لیئے کیا اقدامات کر رہی ہے۔؟
٭عطاء اللہ عیسیٰ خیلوی:۔عمران خان کی قیادت میں ہمارا احتجاج پر امن ہے۔ عمران خان نے اشتعال پھیلانے کی کبھی کوئی کوشش نہیں کی ہم نے 126 دن کا دھرنا دیا تو ایک گملا بھی نہیں ٹوٹا۔ ہمارا رائے ونڈ مارچ پر امن ہوگا۔ رائے ونڈ احتجاج کا راستہ ہمیں مسلم لیگ ن نے دکھایا ہے جمائما خان اب عمران خان کی اہلیہ نہیں ہیں لیکن وہ ہمارے لیئے اب بھی قابلِ احترام ہے کہ وہ ہمارے لیڈر کے بچوں کی ماں ہے۔ ان لوگوں نے ان کے گھر کے باہر مظاہرہ کیا عمران خان نے ان کے گھروں کے سامنے جانے کی بات نہیں کی انہوں نے رائے ونڈ جانے کا اعلان کیا ہے انہوں نے کہا ہم پر امن ہوں گے ہماری ہر ممکن کوشش ہو گی کہ صبر کا دامن ہاتھ سے نہ چھوڑیں انہون نے کہا ہماری کوشش ہو گی ہماری وجہ سے،،پی ٹی آئی کی وجہ سے اور ہمارے کسی ٹائیگر کی وجہ سے اس پاک وطن کی ایک اینٹ بھی نہ ٹوٹے۔ ایک بات عرض کر نا چاہتا ہوں کہ ایسے مواقع پر امن و امان قائم رکھنے کی ذمہ داری بنیادی طور پر حکمرانوں اور بر سرِ اقتدار جماعت پر عائد ہوتی ہے۔ پُر امن احتجاج ہمارا حق ہے۔ 14508585_1777380142475972_1223963838_n
٭نیلاب:۔ اس احتجاج میں آپ کی جماعت اکیلی ہے۔ کیا آپ کی جماعت اس ”سولو فلائٹ“ سے اپنے مقاصد حاصل کر پائے گی؟
٭عطاء اللہ عیسیٰ خیلوی:۔پاکستان تحریک انصاف نیک نیتی سے اپنی جدو جہد جاری رکھے ہوئے ہے۔ ہم صاف سُتھری جدو جہد کر رہے ہیں۔ درپردہ ہماری نہ تو کسی سے کوئی انڈر سٹینڈنگ ہے اور نہ ہم منافقانہ سیاست پر یقین رکھتے ہیں۔ عوام عمران خان اور پاکستان تحریک انصاف پر اعتماد کرتے ہیں۔ ہمیں بھر پور عوامی اعتماد حاصل ہے ویسے ایک بات کہوں کہ ”میرا خان سولو فلائٹ میں ہی خوبصورت لگتا ہے

حصہ